Main Menu

شاہ محمود قریشی افغانستان میں: پاکستان کی جانب سے چالیس ہزار ٹن گندم کا تحفہ

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ہفتہ کو افغانستان کے ایک روزہ دورہ کے موقع پر کابل میں افغان صدر اشرف غنی ، چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ اور اپنے افغان ہم منصب صلاح الدین ربانی سے ملاقاتیں کیں۔

دونوں ملکوں کے مابین وفود کی سطح کے مذاکرات بھی ہوئے جس میں امن و سلامتی سے متعلق امور سمیت دو طرفہ تعلقات کے تمام پہلووں کو زیر بحث لایا گیا۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے پاکستانی وفد کی قیادت کی جبکہ صدر اشرف غنی افغان وفد کی سربراہی کر رہے تھے۔

قبل ازیں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور افغان صدر اشرف غنی کے درمیان پینتالیس منٹ تک ون آن ون ملاقات ہوئی ۔ پاکستان اور افغانستان کے درمیان وفود کی سطح پر تقریبا ڈیڑھ گھنٹے کے مذاکرات میں دونوں ملکوں کے درمیان دو طرفہ تجارت، افغانستان میں قیام امن کو حوالے سے پاکستان کا کردار، بارڈر مینجمنٹ اور جلال آباد میں پاکستانی قونصل خانے کی بندش سمیت دیگر اہم امور زیر بحث لائے گئے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان نے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے دورہ کابل کے حوالے سے جاری اعلامیہ میں کہا ہے کہ وزیر خارجہ نے افغان قیادت کو یقین دہانی کرائی کہ پاکستان افغانستان کے دیگر شراکت داروں کے ہمراہ افغان حکومت اور افغان عوام کی قیادت میں مصالحتی عمل میں تعمیری کردار ادا کرنے کیلئے تیار ہے۔

انہوں نے دونوں ملکوں کے درمیان انسداد دہشت گردی اور سیکورٹی کے شعبوں میں تعاون اور رابطوں کی اہمیت پر زور دیا اور اس سلسلے میں افغان پولیس اور قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کو پاکستانی اداروں میں تربیت فراہم کرنے کی پیشکش بھی کی۔

 برادر اور ہمسایہ ملک کے ساتھ پاکستان پائیدار تعلقات کا خواہش مند ہے ۔ اس ضمن میں پاکستان نے افغانستان کو 40 ہزار ٹن گندم کا تحفہ د یا ہے۔طورخم بارڈر سے افغان حکومت کو 40 ہزار ٹن گندم کی فراہمی شروع ہوگئی ہے۔آج 280 ٹن گندم لیکر چار ٹرک افغانستان پہنچے ہیں۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*