Main Menu

برسلز:مقبوضہ کشمیر میں خواتین کے ساتھ اجتماعی زیادتی کے واقعہ پر آگاہی مہم

کشمیرکونسل ای یو نے مقبوضہ کشمیر کے دیہاتوں کنن اور پوشپورہ میں خواتین کے ساتھ اجتماعی جنسی زیادتی اور تشدد کے ستائیس سال پرانے اور بھیانک مگر فراموش شدہ واقعے کو اجاگرکرنے کے لیے 23 فروری سے دو ہفتوں پر محیط آگاہی مہم شروع کردی ہے۔
یادرہے کہ ستائیس سال قبل یعنی23 فروری 1991 کی رات بھارتی فوج کی راجپوتانہ رائفل کے اہلکاروں نے ضلع کپواڑہ کے دوگاوں کنن اور پوشپورہ کو تلاشی کے بہانے محاصرہ لے کر وہاں درجنوں خواتین کی بے حرمتی کی اور انہیں جنسی زیادتی اور تشدد کا نشانہ بنایاتھا۔
اگرچہ اس واقعے کو اڑھائی عشروں سے زائد مدت گزر چکی ہے لیکن اس بھیانگ اور انسانیت سوز واقعے میں بچ جانے والی خواتین کی اس ظلم کے خلاف جدوجہد کی بدولت مقبوضہ کشمیرمیں اس دن کو خواتین کے یوم مزاحمت کے نام سے یاد کیاجاتاہے۔ کشمیری اس جدوجہد کو کشمیرکی آزادی کے لیے جاری تحریک کا حصہ قرار دیتے ہیں جو سترسالوں سے بھارتی قبضے کے خلاف جاری ہے۔
چیئرمین کشمیرکونسل ای یو علی رضا سید نے اپنے ایک بیان کہاہے کہ کنن۔پوشپورہ کے واقعے کو ایک بارپھر اٹھانے کے لیے 23 فروری سے شروع ہونے والی مہم آٹھ مارچ تک جاری رہے گی۔ مہم کے دوران سمیناروں، ملاقاتوں اور رابطوں کے ذریعے یورپی یونین کے حکام اور یورپی پارلیمنٹ کے اراکین اور انسانی حقوق کی تنظیموں کو اس واقعے کے بارے میں یاد دہائی کرائی جائے گی۔
مہم کے اختتامی مرحلے میں آٹھ مارچ کو یورپی پارلیمنٹ میں مقبوضہ کشمیرمیں جاری تحریک آزادی میں خواتین کے کردار کے حوالے سے کانفرنس منعقد ہوگی جس میں جنسی زیادتی اور تشدد کا شکار ہونے والی خواتین کی جسمانی اور ذہنی کیفیت کی بحالی کے لیے اقدامات پر زور دیاجائے گا اور خواتین کی جدوجہد کو اجاگر کیاجائے گا۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*