Main Menu

 پنجاب میں اگلے تین برس تک بناسپتی گھی پر مکمل پابندی کا فیصلہ

 پنجاب فوڈ اتھارٹی (پی ایف اے) نے بناسپتی گھی کے انسانی جسم پر مرتب ہونے والے انتہائی مضر اثرات کے باعث اس کی پیداوار، خرید اور فروخت پر جولائی 2020 تک مکمل پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔

میڈیارپورٹس کے مطابق یہ فیصلہ پنجاب فوڈ اتھارٹی (پی ایف اے) کے سائنسدانوں کے ایک پینل نے کیا جن کے خیال میں بناسپتی گھی کی تیاری کے لیے ٹرانس فیٹی ایسڈس، پلاسمیٹک ایسڈ اور نِکیل کو ’عمل انگیز‘ کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے جو متعدد موذی امراض، جیسے موٹاپا، ذیابیطس، ذہنی اور دل کے امراض اور کینسر کا باعث بن سکتے ہیں۔

پنجاب فوڈ اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل نورالامین کے مطابق پاکستان میں ایک شخص اوسطاََسالانہ 19 کلو گھی یاتیل کا استعمال کرتا ہے جبکہ اس کے مقابلے میں یورپ میں اس کا استعمال 3 کلو سالانہ ہے۔اس ضمن میں عوام کو یہ بتانے کی ضرورت ہے کہ انہیں بناسپتی گھی کی جگہ زیتون، سویا بین، سورج مکھی اور دیگر سبزیوں کا تیل استعمال کرنا چاہیے۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*