Main Menu

 میانمار: روہنگیا مسلمانوں کی مشکلات جوں کی توں

RohangiyaWomenWith2kids

پچھلے ماہ پچیس اگست سے میانمار میں روہنگیامسلمانوں کے خلاف شروع ہونے والے ظلم وستم کی نئی داستان کے باعث اب تک ایک لاکھ 25 ہزار کے قریب افراد بنگلہ دیش میں داخل ہوچکے ہیں جن میں سے ایک عظیم اکثریت روہنگیا مسلمانوں کی ہے۔اس سے قبل بھی چار لاکھ روہنگیا مسلمان برما کی حکومت کی وحشت سے بچ کر بنگلا دیش میں پناہ لے چکے ہیں۔

 میڈیا رپورٹس کے مطابق اقوام متحدہ نے تصدیق کی ہے کہ میانمار کی ریاست رخائن میں شروع ہونے والے تشدد سے گزشتہ 11 روز میں ایک لاکھ 23 ہزار 600 افراد نے سرحد پار کی ہے۔

برما کی سیکورٹی فورسز نے پچھلے گیارہ روز میںکم از کم 400 افرادکو ہلاک کر دیا ہے۔ سینکڑوں گھر جلا دیئے گئے ہیں۔
میڈیا میں آنے والے فوٹیجز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ہجرت کرنے والے قافلوں میں زیادہ تر عورتیں اور بچے شامل ہیں جبکہ زیادہ تر مرد وں اور نوجوانوں کو شاید گرفتار کر لیا گیا ہے یا قتل کر دیا گیا ہے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین یو این ایچ سی آر کے ایک بیان کے مطابق میانمار میں تنازعے کی صورتحال انتہائی تشویشناک ہے اور شہری پناہ کی تلاش میں مارے جارہے ہیں جبکہ عالمی ادارے کو خوراک، پانی اور ادویات کی فراہمی سے بھی روک دیا گیا ہے۔

پاکستان سمیت دنیا بھر میں روہنگیا مسلمانوں کی حالت پر میانمار کی حکومت کے خلاف احتجاج کیا جارہا ہے۔

RohangiyaChild RohangiyaMuslimMigration rohangiyaMuslimsInTrouble






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*