Main Menu

پاکستان نے بریکس تنظیم کا اعلامیہ مسترد کر دیا

brics

پاکستان کی وزارت دفاع اور وزارت خارجہ نے دنیا کی پانچ ابھرتی ہوئی معیشتوں کی تنظیم بریکس کے مشترکہ اعلامیے کو مسترد کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ پاکستان میں کسی بھی دہشت گرد تنظیم کی محفوظ پناہ گاہ موجود نہیں جبکہ افغانستان میں حکومت کے زیرِ کنٹرول نہ رہنے والے علاقوں میں شدت پسند تنظیموں کی موجودگی خطے کے امن کے لیے خطرہ ہے۔

یاد رہے کہ انڈیا، چین، برازیل، جنوبی افریقہ اور روس پر مشتمل تنظیم بریکس نے پیر کو اپنے اعلامیے میں پاکستان میں مبینہ طور پر پائی جانے والی شدت پسند تنظیموں لشکرِ طیبہ اور جیشِ محمد کا ذکر کیا تھا۔

منگل کو پاکستان کے وزیر دفاع خرم دستگیر خان نے اپنے بیان میںکہا کہ پاکستان میں کسی بھی دہشت گرد تنظیم کی محفوظ پناہ گاہیں موجود نہیں ہیں لیکن ہم سب کے لیے لمحہ فکریہ یہ ہے کہ افغانستان کے 40 فیصد علاقے پر افغان حکومت کا کنٹرول نہیں ہے۔

ادھردفترخارجہ کے ترجمان نفیس زکریا نے بریکس کے اعلامیے پرردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ افغانستان سمیت خطے میں ٹی ٹی پی اور جماعت الاحرار سمیت اس سے منسلک بہت سے دہشتگرد گروپ موجودہیں جو پاکستانی عوام کے خلاف پر تشدد کارروائیوں کے ذمہ دار ہیں۔بیان میں کہاگیاہے کہ پاکستان کو داعش ،ایسٹ ترکستان اسلامک موومنٹ اور اسلامک موومنٹ آف ازبکستان کی افغانستان میں موجودگی پر گہری تشویش ہے کیوں کہ یہ جماعتیں خطے کے امن اور سلامتی کےلئے خطرہ ہیں۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*