Main Menu

نوجوان ڈاکٹر اور پنجاب حکومت آمنے سامنے:انتظامیہ کی جانب سے طاقت کا بھر پور استعمال

youngDoctorsProtest

 ینگ ڈاکٹرز اور پنجاب حکومت ایک بار پھر آمنے سامنے آگئے ، ڈاکٹروں نے لاہور سمیت پنجاب بھر کے ہسپتالوں میں ہڑتال کا اعلان کردیا، پنجاب حکومت نے بھی ڈاکٹروں کو ٹف ٹائم دینے کی ٹھان لی ، جیل روڈ ڈاکٹروں اور پولیس کے مابین میدان جنگ بنارہا ، پولیس کی جانب سے لاٹھی چارج ، واٹر کینن اور آنسوگیس کے استعمال سے ینگ ڈاکٹروں کے حوصلے پست ، حکومتی نمائندوں نے بھی ڈاکٹروں کو منانے کی کوشش نہیں کی جس پر ینگ ڈاکٹروں کو اپنا دھرنا ختم کرنا پڑا، ینگ ڈاکٹروں نے سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ نجم شاہ کی تبدیلی تک پنجاب بھر کے ہسپتالوں میں ایمرجنسی ، آوٹ ڈور اور ان ڈور میں کام روکنے کا عندیہ دے دیا۔

 تفصیلا ت کے مطابق گزشتہ روز ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب نے اپنے مطالبات منوانے کےلئے ایک بار پھر لاہور سمیت صوبہ بھر کے ہسپتالوں میں ہڑتال کا اعلان کر دیا ہے’منگل کے روز ینگ ڈاکٹرز نے شیڈول کے مطابق جیل روڈ سے لانگ مارچ کا آغاز کیا اور جی او آر کے سامنے پہنچ کر دھرنا دے دیااور زبردستی پولیس کا حصار توڑ کرجی اوآر میں دخل ہونے کی کوشش کی جس پر پولیس اور مظاہرین میں دھکم پیل ’ہاتھا پائی کا سلسلہ شروع گیا جس پر پولیس نے مظاہرین کو آگے بڑھنے سے روکنے کے لئے آنسوگیس اور واٹر کینن کا استعمال کرتے ہوئے انہیں منتشر کر دیا جبکہ ہسپتالوںمیں ڈاکٹروں کی عدم موجودگی کے باعث مریضوں کو شدید مشکلات و پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔

منگل کے روز لاہور سمیت مختلف شہروں سے آئے ینگ ڈاکٹر ز نے اپنے مطالبات کے حق میں سروسز ہسپتال جیل روڈ سے احتجاجی ریلی نکالی جو مختلف شاہراہوں سے ہوتے ہوئی جی او آر کے سامنے سڑک پر پہنچ گئی جہاں ینگ ڈاکٹرز نے احتجاجی دھرنا دیا اور محکمہ صحت سمیت حکومت کے خلاف نعرے بازی شروع کر دی جنہوں نے ہاتھوں میں بینر ز اور جھنڈے اٹھا رکھے تھے اس دوران ڈاکٹروں نے پولیس کی بھاری نفری کا حصار توڑ کر جی او آر میں داخل ہونے کی کوشش کی تو اس پر پولیس اور مظاہرین میں جھڑپ شروع ہو گئی جس پر پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے واٹر کینن او رآنسوگیس کا استعمال کرتے ہوئے انہیں منتشر کر دیا۔

وائے ڈی اے کے مطابق پولیس نے احتجاج کرنے والے 7 ڈاکٹروں کو گرفتار کر لیااور آنسوگیس کے شل لگنے سے 4ڈاکٹر زخمی ہو گئے اورمتعدد ڈاکٹر وں کی حالت غیر ہو گئی انہیں فوری طور پر سروسز ہسپتال کی آئی سی یو میں منتقل کر دیا جہاں انہیں طبی امداد فراہم کی گئی منگل کے روز ینگ ڈاکٹرز کی ریلی ہسپتالوں میں مریضوں اور سڑکوں پر شہریوں کے لیے دن بھرمصیبت بنی رہی ، جیل روڈاور اس کی اطرافی سڑکوں پر ٹریفک کا شدید دباورہا اور ٹریفک دن پھر جام رہی جس سے گاڑیوں کی لمبی لمبی قطاریں لگی رہیں تاہم بعد ازاں سی ٹی او لاہور نے جیل روڈ پر پولیس کی بھاری نفری کی مدد سے ٹریفک کو بحال کروایا ٹریفک جام سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا پولیس کے تشدد کے خلاف ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن نے پنجاب کےتمام ہسپتالوں میں ہڑتال کا اعلان کردیاہے۔ ینگ ڈاکٹرز کے عہدیداروں نے بعدازاں سروسز ہسپتال میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ جب تک ہمارے مطالبات نہیں مانے جاتے احتجاج جاری رہے گااور کوئی ڈاکٹر اپنی سروسز نہیں دے گا۔ینگ ڈاکٹرز کا مطالبہ ہے کہ سنٹرل انڈکشن پالیسی کو میرٹ پر مبنی کیا جائے’سیکرٹری صحت نجم شاہ کو عہدے سے ہٹا جائے ’ہسپتالوںمیں برن یونٹس کے قیام کے ساتھ ساتھ ایک بیڈ پر ایک مریض کے اصول پر عمل درآمد یقینی بنایا جائے ورنہ جب تک مطالبات منظور نہیں کئے جاتے اسوقت تک احتجاج کا سلسلہ جاری رکھا جائے۔

 اطلاعات کے مطابق رات گئے تک لاہورکے بیشتر ہسپتالوں کی ایمرجنسی سے ینگ ڈاکٹرز نے اپنی سروسز واپس لے لی تھی اور ڈیوٹیوں سے غائب ہو گئے تھے جبکہ دوسری جانب سیکرٹری صحت اسپیشلائیزڈ ہیلتھ کیئر نے تمام ہسپتالوں کے سینئر ڈاکٹروں کی موسم گرما کی چھٹیاں منسوخ کرتے ہوئے انہیں ہسپتالوںمیں پہنچے کی ہدایت کردی ہے اور ہسپتالوں کی انتظامیہ کو ہدایت کی گئی ہے کہ جو ڈاکٹر یگم اگست سے غیر خاضر ہیں انکا ریکارڈ مرتب کر کے انکے خلاف تادیبی کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

دوسری جانب سروسز ہسپتال ’جناح ہسپتال ’جنرل ہسپتال او ردیگر ہسپتالوں کے شعبہ حادثات میں ڈاکٹروںکی عدم موجودگی کے باعث مریضوں کو شدیدمشکلات اور پریشانی کا سامنا کرنا پڑا ذرائع کے مطابق سروسز ہسپتال کی ایمرجنسی کی تشویش ناک حالت میں آنے والی ایک مریضہ جس کے نام جنت الفردوس بی بی معلوم ہو اہے بروقت طبی امداد نہ ملنے کی وجہ سے دم توڑ گئی جس پر اس لواحقین نے ڈاکٹروں اور ہسپتال انتظامیہ کے خلاف شدید احتجاج کیا ۔

ادھر ینگ ڈاکٹرز پنجاب کے ترجمان ڈاکٹر سلمان کا کہنا ہے کہ پولیس نے گرفتار ڈاکٹرز کو رہاکردیا ہے اس لئے جیل روڈ سے دھرنا ختم کررہے ہیں تاہم سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ نجم شاہ کی تبدیلی تک پنجاب بھر کے ہسپتالوں کی ایمرجنسی ، ان ڈور اور آوٹ ڈور کی ہڑتال جاری رکھیں گے ۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*