Main Menu

شوگر ملز مافیاکسانوں کو ادائیگیاں نہیں کررہا: چوہدری نثار، صدر کسان بورڈ پاکستان

 کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی صدر چوہدری نثار احمد ایڈوکیٹ نے کہا ہے کہ حکومت محکمہ زراعت کو بیوروکریسی کے ماتحت کرکے آئندہ انتخابات میں اس محکمہ کے ہزاروں ملازمین کو سیاسی مقاصد کے لئے استعمال کرنا چاہتی ہے ، کسانوں کے مسائل کا حل موجودہ حکومت کی ترجیحات میں شامل نہیں ، حکومت کی عدم دلچسپی کے باعث لاکھوں ٹن چاول ملک میں پڑا خراب ہورہا ہے ، گنے کی فصل کاشت کرنے والے کسانوں کو شوگر ملز مافیا ادائیگیاں نہیں کررہا ، کمپیوٹرائزڈ لینڈ ریکارڈ سسٹم کے حال ہی میں اجراءکے باوجود اس کا اکثر خراب رہنااور اس سسٹم کو آپریٹ کرنے والوں کا رشوت خوری کے بغیر کام نہ کرناسسٹم کے کرپشن زدہ ہونے کا واضح ثبوت ہے ، حکومت کو ستمبر تک کسانوں کے مسائل حل کرنے کی مہلت دے رہے ہیں اس کے بعد پاکستان بھر کے کسانوں کو اسمبلیوں اور شاہراوںپر احتجاج کے لئے نکالیں گے ۔

کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی صدر چوہدری نثار احمد ایڈوکیٹ نے ایک خصوصی بات چیت کے دوران کہا کہ محکمہ زراعت پیشہ ورزرعی ماہرین پر مشتمل محکمہ ہے اسے بیوروکریسی کے ماتحت کرکے اپنے سیاسی مقاصد کا حصول چاہتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت انڈسٹری اور رئیل اسٹیٹ کو ضرورت سے زیادہ اہمیت دے رہی ہے جبکہ زراعت اور اس ملک کے غریب کسان حکومت کی ترجیحات میں شامل نہیں ہیں ۔ حکومت کی بے حسی اور عدم دلچسپی سے کسانوں کی تمام فصلیں کوڑیوں کے مول ہوکررہی جاتی ہیں اگر حکومت فصل آنے سے پہلے اس کے ریٹ نکال دے تو کسانوں کے لئے یہ سمجھنے میں آسانی ہوجائے کہ ملک میں کس چیز کی ضرورت ہے اور انہیں ان کی محنت کا کتنا معاوضہ ملے گالیکن حکومت کسان کی فصل مارکیٹ میں آنے کے بعد اپنی مرضی کا ریٹ مقرر کرتی ہے جس سے کسانوں کو ان کی محنت کا صلہ بھی نہیں ملتا ۔

 ایک سوال کے جواب میں کسان بورڈ پاکستان کے صدر کا کہنا تھا کہ حکومت کے کسانوں کو ریلیف دینے کے دعویے حقیقت کے برعکس ہیں چھوٹے کسانوں کو باردانہ ملتا ہے نہ ہی ان کی قرضوں تک رسائی ہوتی ہے ۔ پٹواری کلچر کے خاتمے کے لئے لینڈ ریکارڈ کمپیوٹرائزڈ کرنے کا نظام حال ہی میں متعارف کروایا گیا لیکن یہ نظام اکثر خراب رہتا ہے اور اس سسٹم کو آپریٹ کرنے والے رشوت خوری کے بغیر کوئی کام نہیں کرتے ۔ کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی صدر کا کہنا تھا کہ حکومت نے ستمبر تک کسانوں کے مسائل حل نہ کیئے تو پاکستان بھر کے کسان احتجاجی مظاہرے کریں گے ۔

کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی صدر چوہدری نثار احمد ایڈوکیٹ کا کہناتھا کہ وزیراعظم میاں نواز شریف کی کرپشن سب کے سامنے عیاں ہوچکی ہے اس لئے انہیں چاہئے کہ وہ جاتے جاتے کسانوں کے مسائل حل کرکے اپنی آخرت کو سنوار لیں ۔ حکومت بسترمرگ پر پڑی ہے اپنی آخرت سنوارنے کے لئے حکومت کسانوں کے مطالبات فوری تسلیم کرے ۔

کسان بورڈ پاکستان کے صدر کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہماری حکومت کی عدم دلچسپی کے باعث بھارت نے چاول کی عالمی منڈی پر قبضہ جما رکھا ہے اس لئے پاکستانی چاول کی مارکیٹ میں قیمتیں 4 سال سے مسلسل گررہی ہیں ۔ حکومت کو چاہئے کہ وہ سپر چاول کی قیمت میں اضافہ کرے ۔ حکومت سپر چاول فی بوری کی قیمت 2500 روپے مقررکرے ۔

انٹرویو : اشفاق مغل / تصاویر : شاہنواز






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*