Main Menu

 وانی شہید کی پہلی برسی: بھارت کی مقبوضہ کشمیر میں ریاستی دہشت گردی

BurhanWaniShaheed

مقبوضہ کشمیر میں مقبول نوجوان رہنما برہان مظفر وانی کی شہادت کی پہلی برسی پر کرفیو اور دیگر پابندیوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے مقبوضہ علاقے بھر کی سڑکوں پر ہزاروں بھارتی فوجی اور پولیس اہلکار گشت کرتے رہے۔

کشمیر میڈیاسروس کے مطابق فوجیوں نے سڑکوں پر جگہ جگہ لکھ رکھا تھا کہ آگے بڑھنے کی کوشش کرنے والوں کو گولی مار دی جائے گی تاہم ان دھمکےوں کے باوجودکئی علاقوں میں لوگ گھروں سے باہر نکل آئے اور بھارت مخالف مظاہرے کیے۔ انہوں نے پاکستان اور آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف فلک شگاف نعرے لگائے۔ مساجد کے لاﺅڈ سپیکروں سے بھی آزادی کے حق میں ترانے نشر کیے جاتے رہے۔ پوری مقبوضہ وادی ، بھدرواہ اور جموںکے دیگر علاقوں میں ہفتہ کو مکمل ہڑتال کی گئی۔

مقبوضہ کشمیر میں سید علی شاہ گیلانی ، میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ مزاحمتی قیادت نے شہید برہان وانی اور اس کے دیگر ساتھیوں سمیت 2016ءکے انتفادہ کے دوران بھارتی فورسز کے ہاتھوں شہید ہونے والے 125سے زائد افراد کوزبردست خراج عقیدت پیش کیا ہے۔

مشترکہ مزاحمتی قیادت نے سرینگر سے جاری اےک بیان میں کہا کہ احتجاجی پروگرام کی پیروی میں وادی کشمیرسمیت خطہ چناب ، کشتواڑ ، ڈوڈہ ، بھدرواہ ، بانہال اور ملحقہ علاقوں میں آزادی کے کاز کی حمایت میں بھر پور اتحاد اور یکجہتی کا مظاہرہ اس بات کا عکاس ہے کہ کشمیری عوام اپنے پیدائشی حق، حق خودارادیت کی جدوجہدکے لیے پرعزم ہے۔
ادھر بھارت نے لائن آف کنٹرول پر بلا اشتعال فائرنگ کی جس سے شہادتوں کی اطلاعات ہیں۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*