Warning: Invalid argument supplied for foreach() in /customers/5/9/3/siasatpakistan.com/httpd.www/wp-content/themes/newspress-extend/function/imp.php on line 26
Main Menu

پیش رفت کے باوجود آئی ایم ایف سے چند معاملات پر اتفاق نہ ہوسکا، وزارت خزانہ

عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سے قرض کے حصول کے لیے جاری مذاکرات کے حوالے سے وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ بات چیت میں پیش رفت ہوئی ہے تاہم چند معاملات پر اتفاق نہ ہوسکا جس کے لیے مذکرات جاری رہیں گے۔

وزارت خزانہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ‘دورے پر موجود آئی ایم ایف مشن سے ہمارے مذاکرات میں اچھی پیش رفت ہوئی ہے اور چھٹی کے دوران مذاکرات جاری رہیں گے’۔

مذاکرات کو جاری رکھنے کا عندیہ دیتے ہوئے وزارت خزانہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ آئی ایم ایف مشن سے مذاکرات 29 اپریل سے شروع ہوئے تھے جو 10 روز جاری رہے تاہم کوئی حتمی نتیجہ سامنے نہیں آیا تاہم چھٹیوں کے دوران بھی تبادلہ خیال جاری رکھا جائے گا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ چند معاملات پر ڈیڈلاک موجود ہے جس کو اگلے دو روز میں حل کردیا جائے گا کیونکہ وزیراعظم چاہتے ہیں کہ معاشرے کے غریب طبقے کو بھی تحفظ دینا ہے۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف کا بیل آؤٹ پیکج آخری لمحات میں پھر ڈیڈلاک کا شکار ہوگیا کیونکہ بجلی، گیس مہنگی اور بھاری بھرکم نئے ٹیکس لگانے کی شرائط پر پاکستان نے تحفظات کا اظہار کیا ہے جس کے باعث مذاکرات کو مزید دو دن جاری رکھنے کا فیصلہ کیا گیا۔

خیال رہے کہ شیڈول کے مطابق آئی ایم ایف وفد کو پاکستانی حکام سے مذاکرات مکمل کر کے 10 مئی کو واپس لوٹنا تھا تاہم اب وفد دو روز بعد واپس لوٹےگا۔

حکام کے مطابق آئی ایم ایف نے پاکستان کو ساڑھے 6 سے 8 ارب ڈالر قرض فراہم کرنے کے لیے مالیاتی امور سے متعلق سخت شرائط طے کر رکھی ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستانی حکام آئی ایم ایف کی انہی شرائط میں قدرے نرمی لانے کے لیے آئندہ دو روز بھی مذاکرات جاری رکھیں گے۔

آئی ایم ایف پیکیج کے حوالے سے دو روز قبل کہا گیا تھا کہ پاکستان اور آئی ایم ایف کے مابین عملے کی سطح پر ہونے والے سمجھوتے کی تکمیل 10 مئی کو متوقع ہے جس میں دونوں فریقین 2 سال کے عرصے میں 700 ارب روپے کی ٹیکس میں دی گئی چھوٹ ختم کرنے پر راضی ہوگئے ہیں۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*