Warning: Invalid argument supplied for foreach() in /customers/5/9/3/siasatpakistan.com/httpd.www/wp-content/themes/newspress-extend/function/imp.php on line 26
Main Menu

پیپلزپارٹی نے عدالت عظمیٰ کے سوموٹو اختیار پر سوال اٹھا دیا

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی قیادت نے سپریم کورٹ کی جانب سے جعلی اکاؤنٹ کیس میں نامزد پی پی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو، نائب چیئرمین آصف علی زرداری اور دیگر کی نظرثانی درخواستیں مسترد ہونے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے پارلیمنٹ میں ازخود نوٹس سے متعلق عدالت عظمیٰ کا دائرہ کار زیر بحث لانے کا فیصلہ کرلیا۔

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے بینچ نے جعلی بینک اکاؤنٹس میں عدالت عظمیٰ کے 7 جنوری کے فیصلے کے خلاف نظر ثانی اپیلوں پر سماعت کی تھی۔

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے تھے کہ جعلی اکاؤنٹس سے اربوں روپے کی برآمدگی کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔

دوسری طرف پارٹی رہنماؤں کے مطابق آصف علی زرداری نے اسلام آباد میں زرداری ہاؤس اور بلاول بھٹو لندن میں پریس کانفرنس کریں گے۔

اس حوالےسے پی پی پی کی رہنما نفیسہ شاہ نے کہا کہ ’ نظرثانی کی اپیلیں مسترد ہونا باعث تشویش ہے اور آصف زرداری اسلام آباد میں جبکہ بلاول بھٹو لندن میں پریس کانفرنس کریں گے‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’پی پی قیادت کے ساتھ جو رویہ اپنایا گیا، دنیا میں ایسا کہیں نہیں ہوتا، جعلی اکاؤنٹ کیس کو 6ماہ ہوگئے تاہم بلاول بھٹو کا موقف اب تک نہیں سنا گیا‘۔

انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس کے احکامات اور تحریری عدالتی حکم میں فرق بھی سوالیہ نشان ہے۔

نفیسہ شاہ نے کہا کہ ’کس کے حکم پر بلاول بھٹو کا نام ای سی ایل میں ڈالا گیا، چیف جسٹس کے سوال کا جواب ابھی تک نہیں ملا‘۔

پی پی پی کی رہنما نے کہا کہ احتساب کے نام پر سیاسی انتقام کا ڈرامہ بے نقاب ہوچکا جبکہ پی پی قیادت کو دیوار سے لگانے کی کوشش کی جارہی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جہاں کا مقدمہ ہے، وہیں سنا جائے کا قانون پی پی قیادت کے لئے کیوں نہیں؟ بھٹو کیس ریفرنس آج تک کیوں زیرالتوا ہے؟۔

علاوہ ازیں پیپلز پارٹی کے رہنما فرحت اللہ بابر نے جعلی اکاؤنٹ اکاﺅنٹس کیس میں سپریم کورٹ میں دائر نظرثانی پٹیشنز کے مسترد کئے جانے پر مایوسی کااظہار کیا۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ سپریم کورٹ کے سوموٹو لینے کے اختیار کی حدود متعین کی جائیں، اس کی حدود متعین کرنے کے لئے پارلیمنٹ میں بحث ہونی چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ پارٹی چیئرمین کو عدالت میں اپنا موقف بیان کرنے کا موقع نہیں دیا گیا جو کہ قانون میں دئیے گئے آرٹیکل 10(a) کی نفی ہے۔

فرحت اللہ بابر نے کہا کہ پاکستان پیپلزپارٹی عدالت کے فیصلے کا احترام کرتی ہے چاہے وہ اس سے اتفاق نہ کرتی ہو اس لئے پارٹی آرٹیکل 184(3) پر پارلیمنٹ میں بحث کے لئے کام کرنا شروع کرے گی تاکہ از خود نوٹس کے اختیارات کا تعین کرنے کے لئے قانون سازی کی جا سکے۔






Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked as *

*